#ffffff#81d742#eeee22

غزلیں

کچھ تو کہو

کچھ تو کہو
ارشاد عرشی ملک

arshimalik50@hotmail.com

تنویر مجتبےٰ صاحب کے بیٹےمنور مجتبےٰ(نومی)کی امریکہ میں اچانک حادثاتی موت پر میں نے اس کی والدہ خالدہ تنویر صاحبہ کے جذبات تحریر کرنے کی کوشش کی ہے۔گویا کہ خالدہ اپنے بیٹے نومی سے مخاطب ہیں۔                                                   

                                                  

تم جہاں جا کے بس گئے نومی،وہ ہے کیسا دیار کچھ تو کہو

لوگ کیسے ہیں […]

Rate: 0
By |June 23rd, 2014|غزلیں|0 Comments

میں مر کر بھی رہوں شائد انہیں اشعار میں زندہ

میں مر کر بھی رہوں شائد انہیں اشعار میں زندہ

ارشاد عرشی ملک

arshimalik50@hotmail.com

ہو جیسے درد کا سُر شوخیِ اظہار میں زندہ

میں مر کر بھی رہوں شائد انہیں اشعار میں زندہ

 

مرے شعروں میں میری سسکیاں سُن کر سمجھ لینا

میں چنوائی گئی پھر بھی رہی دیوار میں زندہ

 

بظاہر مقبرہ ہے زندگی اک ہُو کا عالم ہے

پر اک […]

Rate: 0
By |June 23rd, 2014|غزلیں|0 Comments

مجھے ساتوں سُروں کا لُطف اس جھنکار میں آئے

مجھے ساتوں سُروں کا لطف اس جھنکار میں آئے

 

ارشاد  عرؔشی  ملک 

 

 

ہتھیلی   پر  لیے   دل   عشق  کے   بازار  میں  آئے              

ہم   اک  ٹوٹا  کھلونا   بیچنے   بے  کار   میں   آئے               

             

                        بہت انمول  تھے  جذبے  دلوں میں  قید تھے  جب تک 

                 بہت   ہلکے  ہوئے   جب   پیکرِ  اظہار  میں  آئے

 

سبھی  نے  ہم کو  سمجھایا  قدم  مت  عشق  میں  رکھنا                   

مگر  […]

Rate: 0
By |June 23rd, 2014|غزلیں|0 Comments

مجھے دے دو

مجھے دے دو

 

ارشاد عرشی ملک

 

Arshimalik50@hotmail.com

 

عطا ہوسوچ کی وُسعت،غزل خوانی،مجھے دے دو

مرا کھویا ہوا تخت سُلیمانی، مجھے دے دو

 

تمہارا کچھ نہ بگڑے گا ذرا سی دل نوازی سے

رُخِ روشن کی اِک لمحے کی تابانی ، مجھے دے دو

 

مبارک ہو تمہیں یہ عیش و عشرت کی فراوانی

فقط اِک دردِ بے پایاں کی ارزانی، مجھے دے دو

 

متاعِ […]

Rate: 0
By |June 23rd, 2014|غزلیں|0 Comments

کیا کرتے

کیا کرتے

 

ارشاد عرشی ملک

 

تُم سے قول و قرار کیا کرتے

عمر کا اعتبار کیا کرتے

زخم تھے بے شمار کیا کرتے

ایک دو غم گُسار کیا کرتے

مانگ سکتے نہ چھین سکتے تھے

ہم تھے اہلِ وقار کیا کرتے

اُن کے لہجے میں سرد مہری تھی

التجاء بار بار کیا کرتے

اُن کے قدموں میں رکھ دیا سر کو

اور اب انکسار کیا […]

Rate: 0
By |June 23rd, 2014|غزلیں|0 Comments