کچھ تو کہو

ارشاد عرشی ملک

arshimalik50@hotmail.com

تنویر مجتبےٰ صاحب کے بیٹےمنور مجتبےٰ(نومی)کی امریکہ میں اچانک حادثاتی موت پر میں نے اس کی والدہ خالدہ تنویر صاحبہ کے جذبات تحریر کرنے کی کوشش کی ہے۔گویا کہ خالدہ اپنے بیٹے نومی سے مخاطب ہیں۔                                                   

                                                  

تم جہاں جا کے بس گئے نومی،وہ ہے کیسا دیار کچھ تو کہو

لوگ کیسے ہیں شہر کیسا ہے، کیسے لیل و نہار کچھ تو کہو

 

میری آنکھوں کی روشنی تھے تم،میرے آنگن کی چاندنی تھے تم

اک اندھیرا سا چھا گیا ہر سُو،دل ہے تاریک و تار کچھ تو کہو

 

اپنے بستر پہ لیٹتی ہوں ہوں میں ،ایک امید اک تمنا میں

خواب میں دو گھڑی تو آجاو،ہے بہت انتظار کچھ تو کہو

 

یاد کرتی ہے تجھ کو منصورہ،تیری دادی اُداس رہتی ہے

باپ کی جان تجھ پہ صدقے ہو ماں کی ممتا نثار کچھ تو کہو

 

ایسا لگتا ہے تم نئے گھر میں جا کے مصروف ہو بہت نومی

کمپیوٹر پہ رابطہ کوئی،فون کوئی نہ تار، کچھ تو کہو

 

میں تو پہلے ہی تیری دُوری سے خود کو مانوس کر نہ پائی تھی

اور اب مستقل جدائی کا کیسے جھیلوں یہ وار کچھ تو کہو

 

میں بظاہر خموش ہوں نومی ،ہر گھڑی دل میں تجھ سے باتیں ہیں

مجھ کو کچھ تو جواب دو پیارے، میرے کوہِ وقار کچھ تو کہو

 

اپنے غم کو چھپائے رکھتی ہوں ،میں تو منہ سے سے بھی کچھ نہیں کہتی

پھر بھی آنکھوں سے جھانک لیتی ہیں حسرتیں بے شمار کچھ تو کہو

 

دور یوں تو بہت تھا امریکہ،پر تھی اک آس مل تو سکتے ہیں

ہائے دنیا کی سرحدوں کو بھی ،کر لیا تم نے پار کچھ تو کہو

 

کیسے بہلاوں اپنا دل پیارے، میں بھری محفلوں میں تنہا ہوں

یوں تو دنیا میں دل لگانے کے ،   راستے ہیں ہزار کچھ تو کہو

 

تیرے بِن ٹھیک سے مجھے نومی،کچھ دکھائی بھی اب نہیں دیتا

میری آنکھوں میں دُھند سی ہے یا شہر ہے پُر غبار کچھ تو کہو

 

یاد کرتے ہیں ہر گھڑی تجھ کو اور چھپ چھپ کے مجھ سے روتے ہیں

وہ ترے بھائی وہ کزن تیرے،ترے بچپن کے یار کچھ تو کہو

 

کوئی جاتا ہے اس طرح بیٹے ،چھوڑ کر پیار کرنے والوں کو

پھر سے ملنے کا ناں کوئی وعدہ،اور نہ قول و قرار کچھ تو کہو

 

ناں لیا پیار ،ناں گلے سے لگے،دفعتاً اُٹھ کے چل دئیے نومی

کیوں اجاڑا ہے شہرِ دل میرا اے مرے شہر یار کچھ تو کہو

 

ہم کو پیارے تھے تم بہت بیٹا،ہم سے بڑھ کر کسی کو پیارے تھے

جس سے ملنے کو چل دئیے نومی ،اس کا زیادہ تھا پیار کچھ تو کہو

 

تجھ کو کچھ مہرباں فرشتوں نے ،اپنی بانہوں میں بھر لیا ہوگا

شور ہو گا کہ دیکھو آیا ہے ،ماں کا خدمت گذار کچھ تو کہو

 

میں تو ہر حال میں مرے مولا،آپ ہی کی رضا میں راضی ہوں

مجھ سے اپنی رضا کے بارے میں میرے پرور دگار کچھ تو کہو

 

Rate: 0