ماں کی محبت کا  بِل

(ماخوذ)    

ارشاد عرشیؔ ملک اسلام آباد

 

اِک چھوٹا نادان سا بچہ، آٹھ برس کی عمر تھی جس کی

ماں کے پاس کچن میں آیا، کاغذاِک ماں کو پکڑایا

ماں حیران سی ہو کر بولی

کیا لکھا ہے اس کاغذ میں؟

بچہ بولا خود ہی پڑھ لیں

میں پڑھوں تو وقت لگے گا،پڑھنے سے بل اور بڑھے گا

ماں نے کاغذ کھولا ،دیکھا، اور حیرت میں ڈوب گئی وہ

 

باغیچے کی گھاس ہے کاٹی ۔۔۔۔۔۔گیارہ    ڈالر

اپنا کمرہ صاف کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بارہ   ڈالر

شاپ پہ جا کر کھیرے لایا ۔۔۔۔۔۔۔گیارہ  ڈالر

چھوٹی بہنوں کو بہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔بارہ  ڈالر

کچرا باہر پھینک کے آیا ۔۔۔۔۔۔۔گیارہ  ڈالر

دادی کو اخبار سنایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گیارہ  ڈالر

آپ کی خاطر برتن دھوئے ۔۔۔۔۔۔گیارہ  ڈالر

کار پہ پرسوں کپڑا پھیرا ۔۔۔۔۔۔۔۔گیارہ  ڈالر

آپ نے مجھ کو دینے ہیں کُل ۔۔۔۔۔نوّے ڈالر

پرچہ پڑھ کر ماں چکرائی،پھر مُسکائی

دل میں بولی ،میرے بھولے بچے تُجھ کو کس نے یہ پٹی پڑھائی؟

ہنس کر بولی ، اِک گھنٹے کے بعد تم آنا

لازم ہے یہ قرض چکانا

اس کاغذ کی پُشت پہ ماں نے خوشخط لکھا

 

نو ماہ تم کو پیٹ میں رکھا۔۔۔۔۔بالکل مفت

دو سالوں تک دودھ پلایا۔۔۔۔بالکل مفت

پوٹی ،پشی ،برسوں پونچھی۔۔۔۔بالکل مفت

جب بیمار ہوا تو پیاری،ساری رات دعائیں مانگیں۔۔۔بالکل مفت

کھانا کپڑے اور کھلونے ۔۔۔۔بالکل مفت

تری ناک اور قے بھی پونچھی۔۔۔۔بالکل مفت

پڑھنا لکھنا تجھے سکھایا۔۔۔بالکل مفت

فیس بھری اسکول کی تیری۔۔۔۔بالکل مفت

تیرے سارے ناز اٹھائے۔۔۔بالکل مفت

 

میرے بیٹے مجھے خوشی ہے،تو خوش خط ہے ،اورحساب کا ماہر بھی ہے

لیکن کچھ نادان ہے بیٹے

ماں کے پیار سے ناواقف ہے،بھولا اور انجان ہے بیٹے

یہی دعا ہے تیری ماں کی ماہر بزنس مین بنے تو

یہ بے غرض دعا بھی بیٹے ۔۔۔۔بالکل مفت

 

اِک گھنٹے کے بعد یہ کاغذ،ماں نے بیٹے کو پکڑایا

پڑھ کر بیٹے کی آنکھوں میں آنسو اُمڈے

وہ شرمایا

ماں کے ہاتھ سے کاغذ پکڑا

بڑے حروف سے اس پر لکھا

ماں گر تیرا پیار نہ ملتا

میں دُنیا میں جاتا  رُل

PAID IN FULL

PAID   IN FUL

Rate: 0