فیشن   ہیں   اختیاری   پردہ   نصاب   لازم

 

ارشاد  عرؔ شی  ملک

 

یہ  نظم  پردے  جیسے  سنجیدہ  مو ضوع  پر  ہلکے  پھلکے  انداز  سے  لکھی  گئی  ہے۔

 

بے  پردگی  سے  بہنوں  ہے   اجتناب   لازم

عورت  کے  واسطے  ہے  شرم  و  حجاب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

انمول  ہے  وہ  موتی  جو  سیپ  میں  چُھپا  ہو

ہوتی ہے اس کے رُخ  پر اک آب  و تاب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

حکمِ  خدا  کے  آگے  بے کار  حیل  و  حجت

  اندر  سنگھار  لازم  ،   باہر   نقاب   لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

شرم  و  حیا کی  سر خی  عورت کے  رخ   کا   غازہ

دل  کو  ہے   موہ  لیتا   تازہ  گلاب  لازم

 

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

گر  دودھ  نہ  ڈھکا   ہو  ، با ہر  کھلا   پڑا   ہو

 بِّلے کی  ہو  رہے  گی  نیت   خراب   لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

رب  کی  رضا  کو  جو  بھی  اپنی  رضا  بنا  لے

مکّھ  پر  کھلے  گا   اسکے  اک  ما ہتاب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

   پہلے  ہم  اپنے  اندر   اک   انقلاب  لائیں

آکر  رہے گا  جگ  میں  پھر  انقلاب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

نفسِ  دُنی  کے  پیچھے  جو شخص  بھی  چلے  گا

ہر  اک  خطا  کا   اس  سے  ہے  ارتکاب  لازم 

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

اس  دورِ خود  سری میں تج  دے  جو  خود  سری کو

اس  عا جزی  کا  اس  کو  ہو  گا   ثواب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

“بلٹ  پروف  جیکٹ”  ہم  عورتوں کی  پردہ

  ہر  بد  نظر  کو  کر  دے  نا  کامیاب   لازم 

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

غضِ بصر کی عادت  زیبا  ہے  مرد  و  زن  کو

اچھی  بری  نظر  کا   ہو  گا   حساب   لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

  بے  پرد  لڑکیوں سے حکمت  سے  بات  کرنا

  ہوتا  ہے  سر  پھرا  کچھ  عہدِ  شباب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

اللہ کی  حدوں  سے  جو  بھی  کرے   تجاوز

ہو  گا   بروز  محشر  اس    پر   عتاب   لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

  سب  پختہ  عُمر  بہنیں  نکتہ  یہ   یاد   رکھیں

  گر ہے  خضاب  لازم  ،  تو ہے  حجاب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

اپنے  گھروں  کو  ہم  نے  جنت  بنا  لیا  گر

دنیا کو  کر  سکیں  گے  ہم  لا   جواب   لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

مغرب کی  رِیس  عرؔشی گر بے  د ھڑک کریں  گی

 ہو  گا  دلوں  کے  اندر   پھر  اضطراب  لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

  کڑوی  دوا  میں  میں نے  شکر  بھی  ہے  ملائی

   اس  نظم  کا    ہے   پردہ   لب  لباب   لازم

فیشن  ہیں   اختیاری   ،  پردہ   نصابِ   لازم

 

Rate: 0