سایہ  فگن  ہے  سر  پر  رمضان  کا  مہینہ

 

ارشاد  عرؔشی  ملک

 

سایہ  فگن   ہے     سر   پر   رمضان    کا    مہینہ

اُدھڑے  ہیں  جو بھی   بخیے  ،  محنت  سے  ان کو  سینا

 

رحمت   کے   خوان   اٹھائے   آئے   اُتر    فرشتے

اور  اِذنِ  لوُٹ   بھی  ہے  ،  سو   لوُٹ   لو   خزینہ

 

ساون   ہے   رحمتوں  کا   ،   بھادوں   برکتوں   کا

بوچھاڑ   میں  نہا   لو   ،   دھو   لو   دلوں  کا    کینہ

 

کنڈی  لگا   کے  دیکھو   ،   جھولی   بچھا  کے   دیکھو

آنسو   بہا   کے   دیکھو   ،   ہر   اشک   ہے   نگینہ

 

گو    اور    بھی    مہینے    ہر    چند   معتبر    ہیں

ماہ  ِ  صیام     لیکن      انمول        ہے      دفینہ

 

قُربِ    خدا  کو   پانا   اِس   ماہ   میں   سہل   ہے

سادہ   مثال   سمجھو   یہ   لفٹ  ،    وہ   ہیں   زینہ

 

کھانے   پہ   زور  کم   ہو   افطار   اور   سحر  میں

دل    میں   انڈیل   لینا     قُرآن   کا     خزینہ

 

بھر  نہ   سکیں  گے  ہرگز  ،   برتن   اگر  ہیں  اوندھے

سیدھا   کرو   دلوں  کو  ،   کچھ   سیکھ   لو   قرینہ

 

دنیا   کی   دولتوں کو   ٹھوکر   پہ   بھی   نہ   رکھے

جس   کو     ہوا     میّسر   اک    سجدہِ    شبینہ

 

حکمِ   خدا  پہ   جو   بھی   ہر  آن   سر   جھکائے

مل  کر   رہے   گا  اس  کو   اک   قالب ِ   سکینہ

 

کیا  کیا  نہ   فیض  پائے   چمٹے  جو  ایک  در  سے

ہر   سمت    بھاگتا     ہے    یہ     بندہِ    کمینہ

 

اس  نفس  کو   نکالو    سینے    کی   مملکت    سے

یہ   ہے   یہود   خصلت   اور   پاک  ہے   مدینہ

 

قُربِ   خدا  کو   پانا   کچھ  کھیل  تو   نہیں  ہے

جلتا  ہے  اس  دیے  میں  بس   خون  اور   پسینہ

 

ماہِ    صیام    اگلا    شائد    نہ    دیکھ    پائوں

دنیا   سے   دل  غنی   ہے  کافی  ہے   اتنا   جینا

 

اس   راہ  گذر  میں  عرؔشی  مرنا   ہی   زندگی  ہے

آسان   تو   نہیں   ہے   یہ   جام  ِ   وصل   پینا

Rate: 0