ایک  احمدی  ماں  کی  لوری

 

ارشاد  عرؔشی  ملک

 

ہر  اِک  لذت  کا  منبع  ہے  خدا  کی  ذات  اللہ  ھوُ

کسی  خوش  بخت  کو  ملتی  ہے  یہ  سوغات  اللہ  ھوُ

ملیں  نامِ  محمدؐ  سے  یہ  سب  برکات   اللہ   ھوُ

وگرنہ  میں  ہوں  کیا  اور  کیا  مری  اوقات  اللہ  ھوُ

 

مرے  بچے ، مرے  نورِ  نظر ، تو  مجھ  کو  پیارا  ہے

مرے  دن  کا  تو سورج  ہے تو  راتوں کا  ستارا  ہے

ترے دم  سے ہی میں ماں ہوں رواں ممتا کا  دھارا ہے

تری  کلکاریوں   سے  گونجتا  آنگن   ہمارا   ہے

خدا  کی  رحمتوں  کی  تجھ  پہ  ہو  برسات  اللہ  ھوُ

مسیحِ  وقت  سے   تجھ  کو  ملیں  برکات   اللہ  ھوُ

 

ذرا  تو سست  پڑ  جائے تو  ڈر  جاتا  ہے  دِل  میرا

سہم  جاتا  ہے  اندیشوں  سے بھر جاتا  ہے  دل  میرا

جو  تو  چپ  چپ سا لگتا ہے  تو  مر جاتا  ہے  دل میرا

تو  ماں  کہہ کر  جو  ہنستا  ہے نکھر  جاتا  ہے  دل میرا

 

نہ   پھٹکے   پاس  تیرے   سایہِ  آفات   اللہ   ھوُ

خلافت  سے  محبت  دے  خدا  کی  ذات  اللہ  ھوُ

 

مگر تجھ  سے بھی بڑھ  چڑھ کر  خدا  سے پیار ہے مجھ  کو

اسی  کے  سامنے   ہر  عجز  کا    اقرار  ہے   مجھ  کو

بِنا  اس  کے  مرا  اک  سانس بھی  دشوار  ہے  مجھ  کو

اور  اسکے  واسطے  بھی  وقت  کچھ  درکار ہے  مجھ  کو

 

اسی  کے  شوق  سے  پر  ہیں  مرے  نغمات  اللہ  ھوُ

اسی  کے  ذکر  میں  ہیں  ان  گنت  لذات  اللہ  ھوُ

 

عبادت  اس کی  میں کر  لوں  جو  تو کچھ  دیر سو  جائے

جو  مجھ  پر فرض  لازم  ہے  قضا  مجھ سے  نہ ہو  جائے

تری  چاہت  نہ  پیارے  اس  قدر  مجھ کو بھگو  جائے

کہ تیرے  لاڈ  اٹھانے  میں مرا  اللہ  نہ  کھو  جائے

 

مری  جاں  کاش  تو  سمجھے  مرے  جذبات  اللہ  ھوُ

تجھے  میری   دعائوں   کے  ملیں  ثمرات   اللہ  ھوُ

 

عداوت  کی  کڑی  دھوپوں  میں  اپنا  سائباں  اللہ

ہر  اک  سیل  ِ  بلا   کے   بیچ   اپنا   بادباں   اللہ

ہمارے  دردِ  تنہائی    کا   واحد   راز داں   اللہ

مصیبت   میں   اذیت  میں  ہمارا   پاسباں   اللہ

 

بہت  برکات  لاتے  ہیں  کڑے  حالات  اللہ  ھوُ

وہ  ہر مشکل  میں رکھ  دیتا  ہے  سر  پر  ہاتھ  اللہ  ھوُ

 

خدا  کو  تو  ابھی  سے  جان لے  پہچان لے پیارے

دلیلوں  کے  بنا  تو  اپنے  رب کو  مان لے  پیارے

تو سچا  عبد  بن جانے کی دل  میں ٹھان  لے پیار

اور اس کے  پیار کی  چادر کو  سر  پہ تان لے پیارے

 

تجھے  جھولا  جھلاتے  میں  نے  کاٹی  رات  اللہ ھوُ

جو تو سوئے  تو  میں کر  لوں  خدا  سے  بات  اللہ ھوُ

 

فجر  پڑھ  لوں  پڑھوں  قرآن  کی آیات  اللہ  ھوُ

ہر  اِک  لذت  کا  منبع ہے  خدا کی  ذات  اللہ  ھوُ

خدا  عمرِ خضر  دے  تجھ  کو  نیک عادات  اللہ  ھوُ

میں  جی  پائی  تو  دیکھوں  گی  تری  بارات  اللہ ھوُ

ترے  بچے کھِلائوں گی میں  پورے  سات  اللہ  ھوُ

انہیں  لوری  سنائوں  گی  یہی  دن  رات  اللہ  ھوُ

ہر  اِک  لذت  کا  منبع  ہے  خدا کی  ذات  اللہ  ھوُ

کسی  خوش  بخت  کو  ملتی  ہے  یہ  سوغات  اللہ  ھوُ

Rate: 0